زلفی بخاری کا نام ای سی ایل میں نہیں تھا وزارت داخلہ کی نگران وزیراعظم کو رپورٹ

نگران وزیرِاعظم کو پیش کرنے کیلئے وزارتِ داخلہ کی رپورٹ تیار کر لی گئی ہے جس میں کہا گیا ہے کہ زلفی بخاری کا نام ای سی ایل میں نہیں تھا، نیب کی درخواست پر بلیک لسٹ میں شامل کیا گیا، ملک سے باہر بھیجنے کیلئے صوابدیدی اختیارات ہیں۔

وزارتِ داخلہ کا کہنا ہے کہ بلیک لسٹ میں شامل شخص کو بیرون ملک بھیجنے کے صوابدیدی اختیارات موجود ہیں، ان اختیارات کو استعمال کرتے ہوئے زلفی بخاری کو عمرہ ادائیگی کی اجازت دی گئی۔

تفصیلات کے مطابق نگران وزیرِاعظم ناصر الملک کو پیش کرنے کیلئے رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ وزارتِ داخلہ کے پاس بلیک لسٹ میں شامل شخص کو ایک بار بیرونِ ملک بھیجنے کے صوابدیدی اختیارات موجود ہیں، جنہیں استعمال کرتے ہوئے زلفی بخاری کو عمرہ کیلئے جانے کی اجازت دی۔

ذرائع کا کہنا ہے کہ عمران خان نے سیکرٹری داخلہ کو فون کر کے زلفی بخاری کے واپس آنے کی یقین دہانی کرائی جس پر وزارتِ داخلہ نے صوابدیدی اختیارات استعمال کئے۔

خیال رہے کہ زلفی بخاری پر آف شور کمپنیوں کی ملکیت کا الزام ہے۔ قومی احتساب بیورو (نیب) میں اس حوالے سے تحقیقات جاری ہیں۔

(Visited 59 times, 1 visits today)

Also Watch

LEAVE YOUR COMMENT