فرانسیسی حکومت نے مسجد کو جبری 2طور پر بند کردیا

توہین آمیز خاکوں سے شروع ہونے والی جھڑپوں کے خلاف کریک ڈاؤن کرتے ہوئے فرانسیسی حکومت نے ایک مسجد کو جبری طور پر 6 ماہ کیلئے بند کردیا ہے۔

بین الاقوامی میڈیا رپورٹس کے مطابق فرانس کے شہر پیرس کے نواحی علاقے پینٹین کی گرینڈ مسجد کو آئندہ 6 ماہ کیلئے بند کرنے کا فیصلہ کیا ہے، مسجد کو سرکاری طور پر سیل کرکے اس پر ایک نوٹس چسپاں کردیا گیا ہے جس میں مسجد انتظامیہ پر الزام عائد کیا گیا ہے کہ انہوں نے فیس بک پر ایسی تقاریر شیئر کیں جس میں مبینہ طور پر ٹیچر کو قتل کرنے پر اکسایا گیا ہے۔

یاد رہے کہ فرانس میں دوران لیکچر ایک استاد کی جانب سے حضرت محمد ﷺ کے گستاخانہ خاکے دکھانے پر 18 سالہ نوجوان نے اسے چھریوں کے وار کرکے قتل کردیا تھا، پولیس کی جانب سے نوجوان کو گولی مار کر ہلاک کردیا گیا تھا۔

واقعے کے بعد فرانسیسی حکومت نے ملک بھر میں مسلمانوں کے خلاف کریک ڈاؤن شروع کردیا اور پکڑ دھکڑ کے دوران ایک ایسے شخص کو بھی گرفتار کیا جس نے اس 18 سالہ نوجوان سے رابطہ کیا تھا۔

(Visited 38 times, 1 visits today)

Also Watch

?